وزیر اعظم عمران خان کی زیرِ صدارت کشمیر ڈویلپمنٹ پیکیج پر اعلیٰ سطح کا اجلاس، 220

وزیر اعظم عمران خان کی زیرِ صدارت کشمیر ڈویلپمنٹ پیکیج پر اعلیٰ سطح کا اجلاس،

(سٹاف رپورٹ،تازہ اخبار،پاک نیوز پوائنٹ )

اجلاس میں وزیراعظم آزاد جموں وکشمیر سردار عبد القیوم نیازی بھی موجود تھے، وفاقی وزیر برائے کشمیر امور و گلگت بلتستان علی امین گنڈا پور، مشیرِ خزانہ شوکت فیاض ترین، وزیرِ خزانہ آزاد کشمیر عبدالماجد خان اور متعلقہ اعلیٰ افسران کی بھی شرکت ،
اجلاس کو کشمیر ترقیاتی پیکیج میں مجوزہ منصوبوں اور انکی لاگت پر تفصیلی طور پر بریفنگ، اس کے علاوہ کشمیر میں جاری ترقیاتی منصوبوں اور حکومت کی جانب سے انتظامی امور کے حوالے سے اصلاحات پر بھی آگاہ کیا گیا،ترقیاتی پیکیج میں اہم شاہراہوں، پُلوں اور سرنگوں کی تعمیر شامل ہے، ،انفراسٹرکچر کی بہتری سے سیاحت کو فروغ ملنے کے ساتھ ساتھ آمدو رفت میں آسانی پیدا ہوگی ، پیکیج میں شہری انتظامی امور کے حوالے سے بھی منصوبے شامل ہیں، شہروں میں موجود فضلے کی تلفی کیلئے حکومت نے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کئے، ان ابتدائی مہینوں میں نہ صرف تجاوزات کے خلاف بڑا آپریشن کیا گیا بلکہ 1200 ٹن فضلے کو تلف کیا گیا، توانائی کے شعبے کے ساتھ ساتھ پیکیج میں سیاحت کو خصوصی اہمیت دی گئی ہے، سیاحتی مقامات کی نشاندہی کرکے ان کو شاہراہوں سے جوڑا جائے گا، سیاحتی مقامات میں سکی ریسارٹ بنانے کیلئے بھی جگہ کی نشاندہی ہو چکی،پیکیج میں بنیادی صحت کی سہولیات کی بہتری اور تعلیم کے شعبےکیلئے بھی ایک خطیر رقم رکھی گئی ہے ، سکولوں و کالجوں میں بنیادی سہولیات کی فراہمی بھی پیکیج کا حصہ ہوگی ، پیکیج میں صنعتی ترقی اور ماحولیات کی درستگی کیلئے بھی بڑے منصوبے شامل ہیں، اجلاس کو بتایا گیا کہ وفاقی حکومت کے سماجی تحفظ کے منصوبوں، صحت کارڈ، نوجوانوں کیلئے روزگار، کسانوں کی معاونت اور کم لاگت رہائش کے حصول کے دائرہ کار کو وسیع کرکے کشمیر کو اس میں شامل کیا جائے گا ، وزیرِ اعظم نے سرکاری اراضی واگزار کرانے اور احتساب کے عمل کو تیز کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ انصاف کا عمل تیز اور شفاف ہونا چاہیے، تجاوزات ہٹاتے وقت غریب آدمی کو متبادل ضرور فراہم کیا جائے، اسلام آباد کے ماڈل پر ریڑھی بانوں کو نشاندہی کئے ہوئے علاقوں میں سہولیات فراہم کی جائیں، سرکاری اراضی کو واگزار کرکے اس پر جنگلات اگائے جائیں، سیاحت کے فروغ کیلئے سہولیات کے ساتھ ساتھ جنگلات کلیدی اہمیت کے حامل ہیں،

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں