شہباز شریف نے مصالحتی سیاست چھوڑ کر جارحانہ انداز اپنانے کا فیصلہ کرلیا ، ن لیگ کے صدر نے منتخب لیگی ارکان کو ہفتے میں کم از کم 2 دن اپنے حلقوں میں موجود رہنے کی ہدایت کی گئی ہے ، لوڈ شیڈنگ، مہنگائی اور حکومت کی ناکام پالیسیوں کو ہدف تنقید بنایا جائے ، عید کے بعد مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف چاروں صوبوں کا دورہ بھی کریں گے ، پارٹی سطح پر عید کے بعد ورکرز کنونشن اور کارنر میٹنگز کا انعقاد کیا جائے گا ۔ 231

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہبازشریف کی کمیونسٹ پارٹی چین کے قیام کے سو سال مکمل ہونے پر صدر شی جن پنگ ، سی پی سی اور چین کے عوام کو مبارک

لاہور(بیوروچیف ایچ ایم فیاض ،تازہ اخبار ،پاک نیوز پوائنٹ )

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہبازشریف نے کمیونسٹ پارٹی چین (سی پی سی) کے قیام کے سو سال مکمل ہونے پر چین کے صدر اور سی پی سی کی سینٹرل کمیٹی کے جنرل سیکریٹری شی جنگ پنگ کو مبارک دی ہے۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ سی پی سی کے قیام کو سو سال مکمل ہونا چین کے عوام اور دنیا بھر میں چین کے دوستوںکے لئے ایک تاریخی موقع ہے۔ انہوں نے کہاکہ گزشتہ صدی کے دوران سی پی سی کی کامیابیاں بلاشبہ تاریخی سنگ ہائے میل کی حیثیت رکھتی ہیں۔ شہبازشریف نے کہاکہ سی پی سی نے دانائی، قائدانہ بصیرت و جماعتی وابستگی اور ہر مرحلے پرانتہائی تدبر سے مشکلات کا کامیابی سے سامنا کیا ہے، خواہ یہ مرحلہ آزادی کی جدوجہد کا ہو، نظام کو استوار کرنے، ’خودانحصاری‘ کے اصول کی بنیاد پر قومی تعمیر نو کا ہو، معاشی اصلاحات اور اس کے نتیجے میں اپنی مارکیٹ کے لئے نئے دروازے کھولنے کا ہو ، انسداد رشوت ستانی کی مہم ہو، چینی اوصاف اورشناخت کے ساتھ مارکیٹ اکانومی کو متعارف کرانا ہو، بیلٹ اینڈ روڈ کااقدام ہو، غربت کا خاتمہ ہو،یا پھر عالمی منظر نامے میں فعال اور بااعتماد چین کے طورپر ابھرنا ہو، سی پی سی اور اس کی قیادت ہر آزمائش میں پورا اتری۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہاکہ سی پی سی نے چین کو ایک مضبوط شناخت دینے کے ساتھ مقصد پر یقین سے ایک خوابدیدہ قوت سے عالمی معاشی اور فوجی سٹرٹیجک طاقت میں تبدیل کردیاشہبازشریف نے کہاکہ گزشتہ سو برس کے دوران سی پی سی کی تاریخ اس حقیقت کا زندہ ثبوت ہے کہ عوام کی خدمت اور اس کی فلاح وبہبود اس کے فلسفے کا بنیادی اصول ہے جس سے سی پی سی کی پالیسیز نے جنم لیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہاکہ سی پی سی جس ترقیاتی ماڈل پر کاربند ہوئی ہے وہ ’چین کا خاصا‘ ہے۔ انہوں نے کہاکہ سی پی سی کی قیادت میں چینی عوام کا جذبہ حب الوطنی، سخت محنت، مکمل یقین، اعتماد اورپر اعتماد چین اس کے معاشی معجزے کے پس پردہ کارفرما اصل قوت ہے۔ قومی ترقی میں شرکت کا احساس سی پی سی کی عوام دوست پالیسیز کا ایک مستقل پہلو ہے۔ شہبازشریف نے کہاکہ سی پی سی کا بنیادی تصور یہ ہے کہ کہ تمام قومیتوں سے تعلق رکھنے والے افراد کی کشادہ دلی سے خدمت کی جائے۔ سی پی سی کی قیادت ہر سطح پر ہمیشہ عوام کے ہمیشہ قریب رہی ہے لہذا اسے اپنے عوام کا مکمل اعتماد اور بھروسہ حاصل ہے۔ انہوں نے کہاکہ سیلاب، زلزلہ سمیت قدرتی آفات ارو ہنگامی حالات میں اور خاص طورپر حالیہ کورونا وبا کے دوران جس جذبے، تدبر اور صلاحیت سے چین کی قیادت اور حکومت نے کام کیا ہے اور ان مشکل حالات سے نبردآزما ہوئے ہیں ، اس نے چین کے عوام کے اپنی قیادت پر اعتماد کو مزید بڑھایا ہے۔
شہبازشریف نے کہاکہ سی پی سی اور جنرل سیکریٹری شی جن پنگ کا تشکیل کردہ چین کی ترقی کا ماڈل یکساں ثمرات پر مبنی شراکت داری اور کمیونٹی کے مشترکہ مفادات کا حامل ہے۔ دنیا آگے کی طرف تب ہی جائے گی جب اس پیغام کے بنیادی مقصد کی طرف توجہ دے گی۔ انہوں نے کہاکہ عالمی شمال اور عالمی جنوب میں بڑھتی ہوئی عدم مساوات کی خلیج تب ہی ختم ہوسکتی ہے جب عالمی برادری تصادم کے بجائے تعاون کی راہ کا انتخاب کرے اور معاشی ترقی کے ثمرات دیگر دنیا سے بانٹے۔
پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہاکہ سی پی سی کی کامیابی کی کلید اس کی پالیسیوں کا لچک دار ہونا ہے، جن کا بنیادی مقصد و ہدف ملک کو مضبوط ،خوش حال، شہریوں کی فلاح وبہبود کو یقینی بنانا اور عالمی امن وترقی میں اپنا فعال اور متحرک کردار ادا کرنا ہے۔ سی پی سی اور اس کی گورننگ پالیسیز دنیا کے لئے ایک قابل تقلید مثال ہے۔
انہوں نے کہاکہ ”ہمہ جہت مشکلات کا سامنا کرنے اور کشمکش سے باہم تقسیم شدہ عالمی ماحول میں سی پی سی کی قیادت میں پرامن چین کا ابھرنا دنیا میں استحکام اور معقول سوچ کے فروغ کا باعث ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں